15 Shaban Manqabat 2021 | Intezaar e Faraj | Manqabat Imam Mehdi 2021 | Isteghasa Imam Mehdi 2021

0%
Add To Favorites
  • Views: 47
  • Runtime: 07:46
  • Added: 2 weeks ago
Shia Online Community
Shia Online Community
50071 subscribers

15 Shaban Manqabat | Manqabat Imam Mehdi 2021 | Isteghasa Imam Mehdi 2021 | Imam Zamana Manqabat 2021 | Ahmed Raza Nasiri

Video details.
Title | INTEZAAR E FARAJ
Reciter and Composed | Ahmed Raza Nasiri
Voice-over | Iqbal Haider Nadeem
Poetry | Syeda Naqvi
Translation | Syeda Jinan Zaidi
Chorus | Ahmed Raza Nasiri, Mir Basharat Baltistani, Rao Muttahar
Audio | RWDS
Video | MZ Photography
DOP | Mehmood Ali Achoali
Editor | Muhammad Ali
Co-actors | Syed Hassan Raza Zaidi, Ali Shigri Baltistani.
Special thanks | Own Rizvi, Syed Shahrukh Raza Zaidi, Muhammad Abbas Karim, Adil Hyder 
Creatives | Shuja Gfx
Produced / Presentation | Intezaar-e-Faraj انتظارِ فرج|
==============================

=====================

MANQABAT - L Y R I C S

میری طرف سے لکھو خط میرے امام عج کے نام
کہ انتظارِ فرج میں تڑپ رہا ہے غلام

لکھو کہ دردِ جگر لاعلاج ہے مولا عج
میرے وطن میں درندوں کا راج ہے مولا عج
سجی یوں کرب وبلا پھر سے آج ہے مولا عج
یہاں پہ حر تو کوئی ابتہاج ہے مولا عج
پڑے ہیں ماند میرے گھر کے سب چراغ لکھو
قلم اٹھاو میرے دل کا داغ داغ لکھو

قضا کی گود سناتی ہے لوریاں اِنکو
سکھا رہی ہے ابھی چلنا زندگی جِنکو
نگل رہی ہے ستم کی یہ تیرگی دن کو
سنے گا کون ہماری صداۓ ہل من کو
وہ دن سکون کے گویا کہ خواب جیسے تھے
پڑے ہیں زرد جو چہرے گلاب جیسے تھے

شہید باپ کا سینے پہ زخم کھاۓ ہوئے
نگاہیں راہ میں مولا عج تیری لگاۓ ہوئے
تڑپ کے روتے ہیں گودی میں منہ چھپائے ہوئے
سوال کرتے ہیں مادر سے بوکھلائے ہوئے
بتاؤ ظلم زمانے سے دور کب ہو گا
یتیم پوچھتے ہیں ماں ظہور کب ہو گا

قیامِ غم ہے یہاں پر قضا کے ڈیرے ہیں
خدا کے دین کے پیچھے پڑے لٹیرے ہیں
ستم کی زد پہ ہیں جو بھی غلام تیرے ہیں
سپاہِ شمر کے رہبر کے گرد گھیرے ہیں
یزیدِ وقت کی رکتی نہیں ستم رانی 
  شقی نے مار دیا قاسمِ سلیمانی

اٹھی ہے شام سے زینب س کی المدد کی صدا
پکارتی ہے تجھے دیکھ شہہ کی کرب و بلا
بلا رہی ہے بقیعہ میں فاطمہ زھرہ
نقاب رخ سے ہٹا کر اے وارثِ کعبہ
اسیرِ شام کو زندان سے چھڑا بیٹا 
 سکینہ ڈھوند رہی ہے مدد کو آ بیٹا

نصیب صبح کے تارے کو تیرا نور نہیں
نگاہِ عشق کا کعبہ ہوا کیوں طور نہیں
یہ راز کیا ہے ہمیں اس کا کچھ شعور نہیں
مگر یہ سچ ہے کہ ہم بھی تو بے قصور نہیں
دعاۓ عہد بھی پڑھتے ہیں شور و شین کے ساتھ
عمل یزید کے تابع ہیں دل حسین ع کے ساتھ

ملے ہمیں کوئی مہلت کی رات تو شاید
بدل دے حر کے وہ سوۓ نصیب کو شاید
ابھی بھی کوفے میں کوئی حبیب ہو شاید
ہو منتظر تیری ہل من صدا کا جو شاید
چراغِ خیمہ کسی رات تُو بجھا تو سہی
حسینِ عصر ہمیں آ کے آزما تو سہی
 

Comments