New Manqabat 2021 | Hussain Ka Akbar | Syed Raza Abbas Zaidi | Manqabat Shahzada e Ali Akbar | 1442

0%
Add To Favorites
  • Views: 58
  • Runtime: 07:02
  • Added: 3 weeks ago
Shia Online Community
Shia Online Community
50071 subscribers

BismiAllah 

New Manqabat 2021 | Hussain Ka Akbar | Syed Raza Abbas Zaidi | Manqabat Shahzada e Ali Akbar | 1442

Recited By | Syed Raza Abbas Zaidi  
Kalam Title | Hussain Ka Akbar   
Poetry By | Janab Zeeshan Abidi 
Composition | Syed Raza Abbas Zaidi
Label | RAZ Records 
Audio Recording | Amir Qurashi
Chorus | Rizwan Mirza and Team  
Video | Ali Arman TNA Production   
Cover Design By | Yawer Abbas Damani
Master/Mixing | Omar Qurashi ODS Studio Karachi
Album | Manqabat | 11th Manqabat 2021 
Releasing Date | 09th Shaban 
-----------------------------------------------
New Manqabat By Syed Raza Abbas Zaidi | A very Precious gift for all Momineen on the Auspicious Occasion
of Amad e Shahzada e Ali Akbar a.s   
-----------------------------------------------
#NewManqabat2021​ #HussainKaAkbar​  #SyedRazaAbbasZaidi​
-----------------------------------------------
Manqabat Lyrics 
عرش سے فرش پہ ھر رخ  سے  کمال  آتا  ھے
گھر  میں  شبیرؑ  کے  شبیرؑ  کا   لال   آتا   ھے
فرش  پر  بن  کے  محمدؐ   کی  مثال  آتا   ھے
اِسکی خلقت کا جو سوچوں تو خیال  آتا ھے
سامنے   پہلے    محمدؐ     کو    بٹھایا     ھوگا
پھر  خدا   نے   علیؑ   اکبرؑ   کو   بنایا    ھوگا

حُکم  خالق   ھے   کے  ہونا   ھے   نزولِ   اکبرؑ
حُسن  ہی حُسن  نظر  آئے  جدھر  جائے  نظر
سج گئے دونوں جہاں کتنا حَسین  ھے  منظر
 بچھ گیا فرش پہ جب عرشِ بریں تب  جاکر
اُمِ لیلٰیؑ     کی    تمناؤں    کا     محور     اترا
نور  کے  سائے   میں  شبیرؑ    کا    اکبرؑ     اترا

باپ سے بیٹے  کی  جب  پہلی  ملاقات  ہوئی
آنکھوں آنکھوں میں حَسینوں ک ی حَسیں بات ہوئی
نورِ  اکبرؑ  کے  اُجالوں  میں  بسر   رات  ہوئی
دیکھا  شبیرؑ  نے  چہرہ  تو   ادا   نعت   ہوئی
جیسا  چاھا  تھا ملا  ھے  مجھے   بیٹا  ویسا
میرا   بیٹا   تو   نظر   آتا   ھے    نانا     جیسا

پائی   جب   آمدِ   اکبرؑ   کی  خبر   زینبؑ  نے
مسکراتے    ہوئے   کی   راہ   بسر   زینبؑ   نے
شمس کی گود میں دیکھا جو قمر  زینبؑ  نے
خود ستاروں  سے  اُتاری  ھے  نظر  زینبؑ  نے
بھائی سے بولی  بہن  نیک  سمجھ  کر  دیدو
میری  آغوش  میں   بھیا   میرا   اکبرؑ   دیدو

لیکے آغوش  میں   زینبؑ   نے  کہا  کیا  کہنے
تیرا  چہرا   تیری   ھر   ایک   ادا   کیا   کہنے
تیری  آنکھوں  میں  نظر  آئے  خدا  کیا  کہنے
خود یہ قرآن  بھی  دیتا  ھے  صدا  کیا  کہنے
جب سے گھر آیا ھے تو حُسن مثالی   بن   کر
چاند   دلہیز    پہ    بیٹھا     سوالی   بن   کر

دیکھا   عباسؑ  نے  چہرا   جو  علی  اکبرؑ   کا
بولے  اک  اور   سپاہی  میرے   لشکر  کو  ملا
رعب  آنکھوں  میں  نظر  آیا  جو  اپنے جیسا
کمسنی  میں  یہ چلن  دیکھکے غازیؑ  نے  کہا
کیسے   تلوار   چلاتے   ہیں   سکھاؤنگا   اِسے
دیکھنا   ثانیِ       عباسؑ       بناؤنگا      اِسے

کہا شبیر ع نے سجاد سے آو دیکھو
علیؑ   اکبر   کی  نظر   ڈھونڈ  رہی ھے  تمکو
چھوٹے  بھائی  کے  قریب  آیا  بڑا  بھائی جو
مسکراتے   ھوئے   اکبرؑ   سے  کہا  کیسے   ھو
ھے قسم حُسن کی  تو  اتنا  حَسیں  ھے  اکبرؑ
تیرے چہرے  سے نظر  ھٹتی  نہیں  ھے  اکبرؑ

دیکھو ذیشان و رضا کیسا   شباب    آیا   ھے
نوجوانی  کے   گلستاں  میں  گلاب   آیا   ھے
اسلئے   چہرہِ   اکبرؑ    پہ     نقاب     آیا    ھے
کوئی   نا  کہدے  محمدؐ  کا  جواب   آیا   ھے
ساتھ  شبیرؑ  کے  اکبرؑ  جو  کہیں  جاتے   ہیں
اسکے  دیدار کو  یوسفؑ  بھی  چلے  آتے  ہیں
----------------------------------------------------

Comments