Nohay 2020 | Laila Duain Kijiye Jeeta Rahay Akbar | Syed Raza Abbas Zaidi Noha 2020 | New Noha 2020

0%
Add To Favorites
  • Views: 33
  • Runtime: 11:12
  • Added: 2 weeks ago
Shia Online Community
Shia Online Community
50076 subscribers

Nohay 2020 | Laila Duain Kijiye Jeeta Rahay Akbar | Syed Raza Abbas Zaidi Noha 2020 | New Noha 2020

Recited By | Syed Raza Abbas Zaidi  
Kalam Title | Laila Duain Lijiye Jeeta Rahay   
Poetry By | Zeeshan Abidi
Album | 3rd Noha Muharram 2020   
Composition & Arrangement | Syed Raza Abbas Zaidi 
Label | RAZ Records
Digital Partner : MobiTising 
Chorus By | Munawar Ali Khan , Rajab Ali Khan , Amanat Ali Khan , Ghulam Abbas  
Video | TNA Production    
Cover Design By | Yawer Abbas Damani  
Audio Recorded & Master/Mixing | ODS Karachi 


====================

Noha Lyrics
مرنے  کیلئے   جب   چلے  میدان   میں    اکبرؑ
پیچھے  چلے  گرتے  ھوئے اُٹھتے  ھوئے سرورؑ
جب  دور  ھوا  شاہؑ کی  آنکھوں سے وہ دلبر
لوٹ   آئے   کہا   مادرِ   اکبرؑ   سے    یہ   روکر

لیلٰیؑ   دعائیں     کیجئے    جیتا   رھے    اکبرؑ
بیٹے کے حق میں ماں کی دعا رد نہیں ھوتی

رخصت کی گھڑی یادہےتم بھی تو وہیں تھی
اکبرؑ کے  کلیجے  سے  نظر  ھٹتی  نہیں  تھی
لیلٰیؑ   ھمارے   لال   کا  نازک  سا  ھے   سینہ
سینے   پہ  نا  بیٹا میرا  کھائے  کوئی برچھی

اس بات پہ شبیرؑ کا  دل  پھٹتا  ھے  غم  سے
ایسے تو  کبھی  دور  نا  اکبرؑ  ھوئے  ھم  سے
اکبرؑ  کو  جیتا  دیکھکر  ھم  جیتے  رھے ھیں
اکبرؑ  کو  مرتا  دیکھکر  مرجائینگے  ھم  بھی

میں  بھول    نہیں    پاؤنگا   احسان   تمھارا
اِس  عالمِ  غربت  میں  دو   تم   ساتھ  ھمارا
اکبرؑ  میرا  جوان  اور   ھم   پر   ھے  ضعیفی
ھم  سے  تو  جواں  لال  کی  میت نا اُٹھیگی

اب   جلد   دعا   کیلئے  ھاتھوں    کو   اُٹھالو
اے    مادرِ  اکبرؑ    میری    زینبؑ   کو    بچالو
اٹھارا   سال  اُسنے   ھی  اکبرؑ   کو    ھے  پالا
اکبرؑ  کی   لاش  دیکھکر  وہ  کیسے   جئیگی

سہرے کے سجانے  کا   جو   ارمان   ھے  لیلٰیؑ
ارمان   ھی     رہجائیگا    اکبرؑ    جو   نا   اْیا
اکبر کو  اپنے  ھاتھ  سے   ھم   دولہا   بنائیں
اٹھارویوں منت  بھی  تو  ھمکو  ھے  بڑھانی

آواز یہی  آتی   ھے   صغراؑ   کی   وطن   سے
اکبار    ملادے   خدا    بھائی   کو    بہن  سے
اکبرؑ سے  مل  نا  پائی   تو   مرجائیگی  صغراؑ
معلوم   ھے   تمکو    میری    بیمار  ھے  بیٹی

یہ  کہتے  ھوئے  لیلٰی  نے  ھاتھوں  کو  اُٹھایا
جسطرح   سے  یعقوب  کو  یوسف سے ملایا
اکبر   کو   ایک    بار   تو سرورؑ   سے  ملادے
مرجاؤنگی یہ بات میں اب  سن  نا  سکونگی

لوٹ   آیا   جو  میدان   سے   شبیرؑ    کا  دلبر
پیاسہ  ھوں  بہت  باپ   سے  کہنے  لگے  اکبرؑ
پانی   کی  بات  آئی   تو   رونے    لگے    مولاؑ
خیمے  کی  سمت   دیکھکر    آواز  یہی   دی

زیشان و رضا وہ جواں پھر  رن  کو  سدھارا
سینے  پہ  سناں  کھائی   تو   بابا   کو   پکارا
پہنچے جواں کے پاس جب روتے ھوئے سرورؑ
برچھی یہی  کہتے  ھوئے  سینے  سے  نکلالی

Comments