Nohay 2020 | Sir Dekh ke Shabbir Ka Shereen Ne Pukara | Syed Raza Abbas Zaidi | Imam Hussain Noha

0%
Add To Favorites
  • Views: 19
  • Runtime: 09:10
  • Added: 2 weeks ago
Shia Online Community
Shia Online Community
50076 subscribers

Nohay 2020 | Sir Dekh ke Shabbir Ka Shereen Ne Pukara | Syed Raza Abbas Zaidi | Noha Imam Hussain

Recited By | Syed Raza Abbas Zaidi  
Kalam Title | Sir Dekh ke Shabbir Ka Shereen Ne Pukara    
Poetry By | Zeeshan Abidi
Album | 6th Noha Muharram 2020   
Label | RAZ Records
Digital Partner : MobiTising 
Chorus By | Munawar Ali Khan , Rajab Ali Khan , Amanat Ali Khan , Ghulam Abbas  
Video | TNA Production    
Cover Design By | Yawer Abbas Damani  
Audio Recorded & Master/Mixing | ODS Karachi 

Noha Lyrics
جب  شیریں  کے  گھر  قافلہ   شبیرؑ   کا   آیا

زینبؑ   سے    کہا   کون  ھو    بتلاؤ   ضعیفہ
ھمشیر  ھوں   شبیرؑ   کی   زینبؑ    نے  پکارا
ملنے  کیلئے  آئے  ھیں   تجھسے   تیرے  مولاؑ

سر  دیکھ   کے  شبیرؑ   کا   شیریں  نے  پکارا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

وعدہ  جو  کیا  آپ  نے  میں  بھول  نا   پائی
اِس گھر میں وہ گھر چھوڑ کے جس دن سے ھوں آئی
تکتی  ھوں  اُسی  روز  سے  میں  آپکا  رستہ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

وہ باتیں رلاتی ہیں جویثرب میں ہوئیں تھیں
اب آیا سمجھ آپ نےکیوں چادریں دیں تھیں
بے  پردہ  نبیؐ  زادیاں  ھیں  ساتھ  میں مولاؑ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

آباد یہ  گھر  دیکھکے  چین  آتا   تھا  مجھکو
یہ  کسکی  نظر   کھاگئی  بتلائیے   کچھ   تو
اُجڑا ھوا  گھر  دیکھکے   دل   روتا  ھے  میرا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا


اکبرؑ  کی  ولادت  کا  سنا  جسگھڑی  میں  نے
بس میں جو میرے  ھوتا  میں  آجاتی مدینے
مل  پائی  نا  اکبرؑ  سے   یہ   افسوس   رھیگا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا


بائیس  برس   شیریں   نے   کسطرح  گزارے
دن رات اسی سوچ  میں  کٹتے  تھے  ھمارے
اک  روز  ضرور  آئینگے  مولاؑ   کا   ھے وعدہ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

سنتی تھی  کے  اِک  آپکی  بیٹی  ھے  سکینہؑ
سوچا تھا کے  ساتھ  آئیگی  جب  آئینگے  آقا
جسطرح سے  وہ آئی  ھے دیکھا   نہیں  جاتا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا  ھی نہیں تھا

مقتل میں بھلا آپ  پہ  کیا  ظلم  ھوئے  ھیں
وہ  بال  میرے  سامنے  مٹی  میں   اٹے  ھیں
جن بالوں  کو  خود  فاطمہ  زھراؑ  نے  سنوارا 
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا


ماتھے  کا  لہو  آپکی  آنکھوں  میں  بھرا  ھے
چوما تھا محمدؐ  نے  جو  وہ  خشک  گلا  ھے
ھے   ریشِ    مبارک    میں    لہو   آپکی مولاؑ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا


زیشان و رضا کہتی تھی شیریں  یہی  روکے
اے کاش میں مرجاتی یہ  دن  آنے  سے  پہلے
ھے   آپکا    سر   آج   میرے    سامنے     رکھا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

Comments