Wahab e Kalbi | Shahid Baltistani Noha 2020 | New Nohay 2020 | Muharram 2020-1442

0%
Add To Favorites
  • Views: 566
  • Runtime: 07:47
  • Added: 9 months ago
Shia Online Community
Shia Online Community
50073 subscribers

Bismi Rabbil Hussain as 

Wahab e Kalbi | Shahid Baltistani Nohay 2020 | New Nohay 2020 | Muharram 2020-1442

Nauha | Wahab e Kalbi ( Abdullah Ibne Umair Al Kalbi)
Recited & Compossed By | Shahid Hussain Baltistani
Poet | Janab Mir Sajjad Mir
Narration: Janab Mir Takallum
Translations | Janab Syed Mohsin Rizvi (USA)
Anjuman | Dasta Ansar e Akberia as Baltistani
Chorus Sangat | Munawar Ali Khan, Rajab Ali Khan, Amanat Ali Khan Aur Ghulam Abbas Khan
Audio Recorded by | ODS Studio (KARACHI) 
Video & Editing By | Ali Arman Baltistani TNA Productions
Production Team | Jafar Darvaish & Baqir Ali Baltistani
Creatives | Baqir Ali Baltistani ☆ BAB Creative

****************************************************************** 

Date: 26 ZilHajj 

 ----------------------------------------------------------------------------- 

●●LYRICS ● ● 

وہبِ کلبی، وہبِ کلبی
عیسٰی کے امتی تم پر سلام ہو

مسلمانوں۔!
مسلمانوں حسین ابن علی رحمت اللعالمین ﷺ کا نواسہ اور محسنِ انسانیت ہے.
 اوراس کی دلیل یہ ہے کہ میدانِ کربلا میں جہاں رسولِ خداﷺ کا کلمہ پڑھنے والوں میں 
چند جانثاروں نے حق مودت ادا کرتے ہوئے پیاس کے عالم میں جامِ شہادت نوش فرمایا
 وہیں حضرت عیسٰی علیہ السلام کے امتیوں میں ایک وہب الکلبی بھی تھا۔
وہب کربلا کا وہ دلہہ ہے جس نے اپنی ماں اور اپنی زوجہ کے ساتھ 
خانوادہ حسین ابنِ علی علیہ السلام پر اپنی جان نثار کردی، 
سلام ہو وہب کی ماں پر، سلام ہو وہب کی ماں پرکہ لشکرِ یزید سے جب اسے اپنے لعل کا سر ملا
 تو اس نے وہب کا سر لُوٹاتے ہوئے "فخریہ انداز سے کہا
“میرا بچہ حسین ابن علیؑ کا صدقہ ہے اور ہم صدقہ واپس نہیں لیتے.”

اکبرؑ کی ماں سے کہتی تھی 
رو کر وہب کی ماں

بی بی میرا پسر کہاں، اکبر تیرا کہاں

بی بی یہ سوچھ کر مجھے آتا نہیں ہے چین
اکبر کا درد دیکھیں گے کیسے بھلا حسین
روتے تھے وہ وہب جو  رگڑتا تھا ایڑیاں

ہم نےتو کلمہ پڑھ لیا اکبرؑ کو دیکھ کر
یہ کیسے لوگ ہیں جنھیں شک ہے حسینؑ پر
لگتا ہے مجھ کو کوئی مسلماں نہیں یہاں

ہٹتی نہیں یوں آپ کے شہزادے سے نظر
شادی کیئے بغیر ہی مرجائیگا پسر 
اک ماں کے دل حال سمجھتی ہے ایک ماں

آنسوں خوشی کے بہنے لگے غم کے ساتھ ساتھ 
مقتل میں نے دیکھا جو پہلو پہ رکھے ہاتھ
روتی تھی میرے لال کو اکبر کی دادی جاں

خود اپنی تربیت پہ کیا شکرِ کبیرا 
زوجہ سے جو وہب نے وصیعت میں یہ کہا
فضہ سے پہلے ہاتھوں میں بندھوانا رسیاں

ہائے اکبرؑ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں زوجہِ وہب سے یہ کہہ دیتی ہوں ابھی
وہ بھائی کہہ کے لاش پہ اکبر کے روئے گی
میں نے سُنا ہے فاطمہ صغرا نہیں یہاں

اُمِ وہب کی لاش پہ لیلہ نے یہ کہا
سجادؔ اس سے بھڑکے مقدر ہو اور کیا
رَن میں شہید ہوگئی بیٹے کے ساتھ ماں

●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●●
 

Comments